April 21, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/americanarmenianlegion.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

حماس نے 7 اکتوبر کےحملے میں حماس جنگجوؤں کے ہاتھوں اسرائیلی عورتوں کی مبینہ عصمت دری کے الزامات پر مبنی رپورٹ جھوٹ کا پلندہ قرار دے کر مسترد کردی

عناصر من كتائب القسام التابع لحماس - فرانس برس

حماس نے اقوام متحدہ کی طرف سے جاری اس رپورٹ کو ’اسرائیل کی خدمت‘ قرار دیتے ہوئے اسے دو ٹوک الفاظ میں مسترد کردیا ہے جس میں اس نے سات اکتوبر کے حملے میں حماس جنگجوؤں کےہاتھوں اسرائیلی خواتین کی مبینہ آبرو ریزی کا شبہ ظاہر کیا ہے۔

خیال رہے کہ اقوام متحدہ کی طرف سے جاری ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سات اکتوبرکو اسرائیل پرکیے گئے حملے میں حماس کے جنگجوؤں کی جانب سے جنسی تشدد اور عصمت دری کے جرائم کا ارتکاب کیا تھا اور اس حوالے سے اسرائیل کی جانب سے عائد کردہ الزامات پر یقین کرنے کی وجوہات موجود ہیں۔

تردید اور مذمت

منگل کے روز حماس نے ایک بیان میں اقوام متحدہ کی رپورٹ میں بیان کی گئی بات کو دوٹوک الفاظ میں مسترد کردیا۔ حماس نے کہا کہ یہ رپورٹ حقیقت میں اسرائیلی افواج کے ہاتھوں فلسطینی بیٹیوں اور خواتین کے ساتھ ناروا سلوک اور ان کےحقوق کی سنگین پامالیوں کے ناقابل تردید شواہد پر پردہ ڈالنے کی مذموم کوشش ہے۔ حماس اس طرح کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے فلسطینی خواتین کے خلاف اسرائیلی فوج کے سنگین جرائم کا نوٹس لینے کا مطالبہ کرتی ہے اور ان گھناؤنے جرائم کے ان مٹ ثبوت موجود ہیں۔

حماس نے اس بات پر زور دیا کہ یہ رپورٹ جھوٹے الزامات ثابت کرنے کی صہیونی کوششوں کی ناکامی کے بعد سامنے آئی ہے جو پہلے ہی بے بنیاد ثابت ہوچکے ہیں۔

حماس نے کہا کہ ہمارے اراکین کے خلاف الزامات جھوٹ پر مبنی ہیں۔ اسرائیلی ریاست اس نوعیت کے الزامات عاید کرنے میں ناکامی کے بعد اقوام متحدہ کو حماس پر دباؤ بڑھانے اور اسرائیلی ریاست کو اس کے جرائم سے بری کرنے کے لیے استعمال کررہی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ “یقین کرنے کی اچھی وجوہات” ہیں کہ جنسی تشدد کی کارروائیاں جن میں عصمت دری بھی شامل ہے حماس کے 7 اکتوبر کو اسرائیل پر غیر معمولی حملے کے دوران کی گئی تھیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ان میں سے زیادہ تر واقعات میں متاثرہ خواتین کو پہلے زیادتی کا نشانہ بنایا گیا اور پھر قتل کر دیا گیا۔کم از کم دو واقعات خواتین کی لاشوں سے زیادتی سے متعلق ہیں۔

حماس تحریک نے اقوام متحدہ کے رپورٹر پر الزام لگایا کہ وہ اسرائیلی اداروں، فوجیوں، اور تل ابیب کے حکام کی طرف سے منتخب کردہ گواہوں پر اپنی رپورٹ پر انحصار کرتے ہوئے اس جھوٹے الزام کو ثابت کرنے کی ناکام کوشش کرتے ہیں۔ اس نوعیت کےالزامات پہلے بھی بین الاقوامی تحقیقات میں جھوٹے ثابت ہوچکے ہیں اور اقوام متحدہ کی اس رپورٹ کی بھی کوئی ٹھوس بنیاد نہیں جوصرف قابض اسرائیلی ریاست کے بیانیے پرمبنی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *